Thursday - 2018 Nov 22
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 87030
Published : 10/11/2015 19:13

جب تک فریق مقابل ایٹمی معاہدے کی خلاف ورزی نہ کرے ایران بھی معاہدے کی پاسداری کرتا رہے گا: صدر مملکت

صدر مملکت ڈاکٹر حسن روحانی نے کہا ہے کہ جب تک فریق مقابل ایٹمی معاہدے کی خلاف ورزی نہ کرے ایران بھی معاہدے کی پاسداری کرتا رہے گا۔

تہران میں بیلجیئم کے وزیر خارجہ ڈیڈیئر رینڈرز کے ساتھ ایک ملاقات میں صدر حسن روحانی نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران خود کو ایٹمی معاہدے پر عملدرآمد کا پابند سمجھتا ہے بشرطیکہ فریق مقابل بھی اس معاہدے کی پاسداری کرتا رہے۔ انہوں نے کہا کہ اس بات میں دو رائے نہیں کہ اگر ایٹمی معاہدے پر پوری طرح عمل کیا جائے تو باہمی اعتماد کی مستحکم بنیادیں فراہم ہوسکتی ہیں۔ 

صدر ایران نے خطے کو درپیش چیلنجوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ، دہشت گردی اور انتہا پسندی نے مشرق وسطی کے بڑے حصے کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے اور اس کا پوری قوت کے ساتھ مقابلہ کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ اگر اس خطے میں دہشت گردی اور انتہا پسندی کو ٹھوس طریقے سے نہ روکا گیا تو اس کا دائرہ تیزی کے ساتھ دنیا کے دیگر علاقوں تک پھیل سکتا ہے۔

ڈاکٹر حسن روحانی نے کہا کہ ایران دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اپنا کردار بحسن و خوبی نبھا رہا ہے اور ضرورت اس بات کی ہے کہ دنیا کے دیگر ممالک بھی دہشت گردی اور انتہا پسندی کو ایک اجتماعی خطرہ سمجھتے ہوئے ترجیحی بنیادوں پر اس کے سدباب کی کوشش کریں۔

ڈاکٹر حسن روحانی نے ایران اور بیلجیئم کے تعلقات کو تعمیری قرار دیتے ہوئے کہا کہ اپنی جیوپولیٹک اور جیو اکنامک پوزیشن کے لحاظ سے ایران، یورپی یونین اور پورے براعظم یورپ کے ساتھ تعلقات کے فروغ کا مرکز بن سکتا ہے۔ ڈاکٹر حسن روحانی نے ایران اور بیلجیئم کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعاون بڑھانے اور توانائی سمیت مختلف شعبوں میں مشترکہ سرمایہ کاری کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ 

بیلجیم کے وزیر خارجہ ڈیڈیئر رینڈرز نے اس ملاقات میں کہا کہ ان کا ملک ایران کے ساتھ تعلقات کو خصوصی اہمیت دیتا ہے اور امید ہے کہ ایران پرعائد پابندیوں کے خاتمے کے بعد تہران اور برسلز کے درمیان تعلقات میں تیزی کے ساتھ فروغ آئے گا۔ انہوں نے کہا کہ بیلجیئم ایران کے ساتھ توانائی سمیت تمام شعبوں میں تعلقات کے فروغ کا خواہاں ہے۔ 

بیلجیئم کے وزیر خارجہ نے کہا کہ ان کا ملک دہشت گردی کے خلاف جنگ کی اہمیت سے اچھی طرح واقف ہے اور ٹھوس بنیادوں پر اس کے سدبات کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔ انہوں نے خطے کی مشکلات کے حل میں ایران کے کردار کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ان کا ملک سمجھتا ہے کہ شام، عراق اور لیبیا کے معاملات کو سیاسی طریقے حل کیا جانا چاہیے۔

ڈیڈیئر رینڈرز نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں صدر ایران کی جانب سے دہشت گردی اور انتہا پسندی سے پاک دنیا کے قیام کی تجویز کا بھی خیر مقدم کیا۔ 

اس موقع پر بیلجیئم کے وزیر تجارت نے کہا کہ ان کا ملک ایران میں سرمایہ کاری اور ٹیکنالوجی کی منتقلی کے لیے تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ بیلجیئم کی تاجر برادری اور سرمایہ کار، ایران میں پیٹروکیمیکل، ٹیکسٹائل، غذائی اشیا نیز پورٹ اور شپنگ کے شعبوں میں سرمایہ کاری کی غرض سے تہران آئے ہیں۔ 

قابل ذکرہے کہ بیلجیئم کے وزیر خارجہ ایک اعلی سطحی سیاسی، اقتصادی اور تجارتی وفد کے ہمراہ پیر کو تہران پہنچے ہیں۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Nov 22