Saturday - 2018 June 23
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 87031
Published : 10/11/2015 19:16

اراک کے ایٹمی ری ایکٹر کی تعمیر نو کا معاہدہ تیار ہوگیا ہے۔ وزیر خارجہ

ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا ہے کہ اراک کے بھاری پانی کے ری ایکٹر کی تعمیر نو کے لیے معاہدے کو حتمی شکل دی جاچکی ہے۔
تہران میں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا کہ اراک کے بھاری پانی کے ری ایکٹر کی تعمیر نو کے بارے میں ایران اور پانچ جمع ایک گروپ کے رکن ملکوں کے درمیان مذاکرات مکمل ہوگئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ معاہدے کا متن تیار ہوچکا ہے صرف اس پر دستخط کے طریقہ کار پر بات چیت ہورہی کیونکہ شام کے بارے میں ویانا میں ہونے والے اجلاس کے دوران پانچ جمع ایک گروپ کے تمام وزارائے خارجہ موجود نہیں ہونگے۔شام کے بارے میں ویانا اجلاس میں ایران کی شرکت کا ذکر کرتے ہوئے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا کہ تہران سمجھتا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ ایک عالمی ذمہ داری ہے ،جبکہ شام کے مستبقل کے بارے میں فیصلہ کرنے کا حق صرف شامی عوام کو حاصل ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ ان دونوں اصولوں پر عمل کیا جائے معاملات کو آسانی کے ساتھ سلجھایا جاسکتا ہے۔ ایران کے وزیر خارجہ نے یہ بات زور دیکر کہی کہ تہران شروع ہی سے شام میں امن و استحکام کے قیام کی کوشش کرتا چلا آیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بحران شام کو فوجی طریقے سے حل کرنے کی سوچ رکھنے والے ممالک کے برخلاف ایران سمجھتا ہے کہ اس بحران کو صرف اور صرف سیاسی طریقے حل کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ دہشت گردی اور انتہا پسندی کا مقابلہ کرنا پوری عالمی برداری کی ذمہ داری ہے۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 June 23