Monday - 2018 Sep 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 87381
Published : 16/11/2015 9:0

پیرس حملوں کی داعش ذمہ دار ہے، فرانسیسی صدر

فرانس کے صدر فرانسو اولاند نے دارالحکومت پیرس میں دہشت گردوں کے حملے کو 'جنگی اقدام' قرار دیتے ہوئے اس کی ذمہ داری داعش پر عائد کردی۔ فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق صدر فرانسو اولاندے کا کہنا تھا کہ یہ ایک جنگی جرم ہے، جو ایک دہشت گرد گروہ نے انجام دیا ہے۔صدر فرانسو اولاندے نے تین روزہ سوگ کا بھی اعلان کیا۔
فرانسیسی صدر نے کہا کہ دہشتگردی کے خلاف ہماری جنگ انتہائی شدید اور بے رحمانہ ہوگی۔ فرانس کے صدر نے اپنے ایک حکم کے ذریعے ملک میں ایمرجنسی بھی نافذ کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ملک بعض مقامات بند اور بہت سے علاقوں میں رفت آمد محدود رہے گی۔
فرانس میں ایمرجنسی کا نفاذ انیس سو پچانوے کے قانون کے تحت عمل لایا گیا ہے اور اس کی مدت بارہ روز ہوگی۔صدر والاند کے ایمرجنسی نافذ کرنے کے حکم کے تحت ساڑھے پانچ ہزار سیکورٹی اہلکاروں کو دارالحکومت پیرس میں تعینات کیا جائے۔ فرانس کی وزرارت داخلہ کے مطابق ملک کے بعض علاقوں میں کرفیو کا نفاذ بھی عمل میں لا یا جاسکتا ہے۔فرانسیسی پولیس نے ایفل ٹارو کو سیل اور عام پبلک کے لیے بند کردیا ہے۔ 
پیرس کے مختلف علاقوں میں فائرنگ ، ایک اسٹیڈیم کے قریب ہونے والے دھماکے اور باتا کالان نامی علاقے میں ایک کنسرٹ ہال میں یرغمال بنائے جانے کے واقعے میں ایک سو اٹھائیس افراد ہوگئے ہیں۔
آزاد ذرائع نے پیرس دہشت گردانہ حملوں میں ہلاک ہونے والوں تعداد ایک سو ساٹھ سے ایک سو اسی کے درمیان بتائی ہے۔
خیال رہے کہ حملہ آوروں کی تعداد آٹھ تھی جنہوں نے خود کش جیکٹس پہن رکھی تھیں۔ فرانسیسی خبر رساں ایجنسی کے مطابق اب تک یہ واضح نہیں ہوسکا کہ فرانس کے دارالحکومت پیرس تک یہ خود کش جیکٹس کس طرح پہنچیں۔واقعے میں تمام آٹھ حملہ آوروں کے مارے گئے ہیں تاہم ان کے سہولت کاروں اور ساتھیوں کی موجودگی کے پیش نظر ملک بھر میں سیکورٹی کے انتظامات سخت کردیئے گئے ہیں۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Sep 24