Wed - 2018 Nov 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 87449
Published : 16/11/2015 18:24

ترکی میں گروپ بیس کے سربراہی اجلاس کا آغاز

ایسے عالم میں کہ دنیا پر پیرس میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کی وجہ سے خوف و وحشت کا سایہ ہے گروپ بیس کا سربراہی اجلاس ترکی کے شہر انتالیا میں شروع ہوگیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق گروپ بیس کا سربراہی اجلاس اتوار کی شام ترکی کے شہر انتالیا میں ترک صدر رجب طیب اردوغان کی تقریر سے شروع ہوگیا۔ رجب طیب اردوغان نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے دہشت گردی سے مقابلے کے لئے نئے بین الاقوامی ڈھانچے کی تجویز پیش کی اور کہا کہ دہشت گردی سے مقابلے کا مسئلہ اس دو روزہ اجلاس کی ترجیحات میں شامل ہونا چاہئے۔
روس کے صدر ولادیمیر پوتن نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کے چیلنجوں سے مقابلہ اور پناہ گزینوں کی مدد صرف دنیا کے تمام ممالک کی باہمی کوشش سے ہی ممکن ہے۔
اتوار کو اس اجلاس کے پہلے دن اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل بان کی مون نے بھی تقریر کی۔ انہوں نے پیرس میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے ان کو وحشیانہ حملے قرار دیا اور کہا کہ دہشت گردی سے مقابلے میں پوری دنیا کو متحد ہوجانا چاہئے۔ بان کی مون نے شام کے متحارب فریقوں سے اپیل کی کہ وہ اپنے اختلافات سے صرف نظر کریں اور قومی سطح پر جنگ بندی ، دہشت گردی سے مقابلے اور حکومتی و قانونی مسائل کے حل کی کوشش کریں۔ انہوں نے کہا کہ برسوں کے اختلافات کے بعد اب تشدد کے خاتمے اور سیاسی راہ حل تلاش کرنے کا ایک بہت اچھا سفارتی موقع مل گیا ہے۔ بان کی مون نے اپنے خطاب میں دنیا والوں سے پناہ گزینوں کے بحران سے دوچار یورپ کی مدد کرنے کی اپیل کی اور کہا کہ یہ بحران دوسری جنگ عظیم کے بعد پناہ گزینوں کا سب سے بڑا بحران ہے۔
اتوار کے روز ترکی کے شہر انتالیا میں شروع ہونے والا گروپ بیس کا سربراہی اجلاس دو دن تک جاری رہے گا۔ پیرس میں ہونے والے حالیہ دہشت گردانہ حملوں کے پیش نظر دہشت گردی خاص طور سے داعش گروہ سے مقابلہ اس اجلاس کے اصل موضوعات میں شامل ہونے کا امکان ہے۔
اطلاعات کے مطابق فرانسیسی صدر فرانسوا اولاند نے پیرس میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کی وجہ سے گروپ بیس کے اجلاس میں شرکت کو منسوخ کر دیا ہے۔
بتایا جاتا ہے کہ فرانس کے وزرائے خارجہ و خزانہ گروپ بیس کے اجلاس میں شرکت کریں گے۔ گروپ بیس کے اجلاس کی حفاظت کے سخت انتظامات کئے گئے ہیں۔ اس وقت ترکی گروپ بیس کا سربراہ ہے۔ دریں اثنا ترکی کے جنوب مشرقی شہر غازی عینتاب میں داعش گروہ نے خود کش حملہ کیا ہے جس میں پانچ پولیس اہلکار زخمی ہوگئے ہیں۔ ترکی کے ذرائع ابلاغ کے مطابق یہ خود کش حملہ اس وقت کیا گیا جب ترک پولیس نے غازی عینتاب شہر میں ایک گھر پر دھاوا بولا۔ بتایا جاتا ہے کہ اس گھر میں داعش کے دہشت گردوں کا خفیہ ٹھکانہ تھا۔ زخمیوں میں ایک کی حالت نازک بتائی گئی ہے۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 14