Friday - 2018 Nov 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 183991
Published : 29/10/2016 19:4

امام حسین علیہ السلام نے اپنی تحریک کے مرکز کے طور پر یمن کا (جہاں پہلے سے شیعہ موجود تھے )انتخاب کیوں نہیں کیا؟

اس وقت یمن اسلامی مملکت کے اہم اور مرکزی شہروں میں شمار نہیں ہوتا تھا اور بصرہ و مدائن جیسے دوسرے شہروں سے جہاں امام(ع) کے ناصروں کے فراہم ہونے اور کوفہ میں موجود آپ(ع) کے سپاہیوں میں شامل ہونے کے امکانات موجود تھے،یمن کوفہ کی طرح نزدیک نہیں تھا۔


ولایت پورٹل:
ابن عباس جیسے بزرگ افراد کے کلمات میں یہ تجویز دیکھی گئی تھی کہ امام حسین علیہ السلام یمن کی جانب چلے جائیں اور وہاں سے اپنے مبلغین کو اطراف میں بھیجیں اور اپنی تحریک کو منظم کریں تاکہ یزید کے مقابلہ میں کھڑے ہوسکیں۔(۱)
اب یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ امام حسین علیہ السلام نے کیوں اس صورت کو بالکل نظر انداز کردیا؟
اس سوال کے جواب میں ذیل کی باتوں پہ توجہ دینا ضروری ہے:
۱۔اگرچہ اہل یمن رسول اللہ(ص) کے زمانے میں حضرت علی(ع)کے یمن میں آنے سے بہت خوش تھے۔(۲)اور آپ کے تئیں اظہار عقیدت کرتے تھے، لیکن کوفہ کے مقابلہ میں اس سرزمین کو امام حسین علیہ السلام کے دور میں ہرگز شیعوں کے مرکز کے طور پر پیش نہیں کیا جاسکتا تھا۔
۲۔اہل یمن کا سابقہ بتاتا ہے کہ نازک اور بحرانی حالات میں ان پر کوئی خاص اعتماد نہیں کیا جاسکتا تھا،کیونکہ حضرت علی علیہ السلام کے زمانۂ حکومت میں انہی یمن والوں نے معاویہ کی فوج کے مقابلہ میں کہ جو زیادہ مضبوط طاقتور نہیں تھی(جو«غارات»کے نام سے مشہور تھی)۔(۳)۔سلسلہ وار حملوں میں سستی دکھائی اور اپنے فرمانروا عبید اللہ بن عباس کو اس طرح تنہا چھوڑ دیا کہ وہ کوفہ بھاگنے پر مجبور ہوئے اور معاویہ کے بے رحم سپاہیوں نے بسر بن ارطاۃ کی سرگردگی میں بڑی آسانی سے شہر پر قبضہ کرلیا اور بعض لوگوں کا (جن میں عبید اللہ بن عباس کے دو چھوٹے بچے بھی تھے) قتل عام کرڈالا۔(۴)
۳۔اس وقت یمن اسلامی مملکت کے اہم اور مرکزی شہروں میں شمار نہیں ہوتا تھا اور بصرہ و مدائن جیسے دوسرے شہروں سے جہاں امام(ع) کے ناصروں کے فراہم ہونے اور کوفہ میں موجود آپ(ع) کے سپاہیوں میں شامل ہونے کے امکانات موجود تھے،یمن کوفہ کی طرح نزدیک نہیں تھا۔
۴۔پیغمبر اکرم(ص) کی رحلت کے ابتدائی مہینوں میں یمن کے کچھ قبیلوں کے مرتدہوجانے کا سابقہ تھا جو ذہنوں میں اس شہر کی طرف سے منفی تصور قائم کئے ہوئے تھا اور اس بات کا امکان تھا کہ اگر امام حسین علیہ السلام اسے تحریک کا مرکز قرار دیتے ہیں تو لوگ حکومت کے خلاف آپ(ع) کی تحریک کو اسی منفی تصور سے آلودہ کرنے کے لئے بخوبی فائدہ اٹھاسکتے تھے۔
۵۔دوسرے اسلامی شہروں سے یمن کی دوری اور علیحدگی اموی حکومت کے لئے یہ امکان فراہم کرسکتی تھی کہ تحریک کے عملی ہونے کی صورت میں وہ اسے آسانی سے کچل دیں۔
۶۔اس وقت امام حسین علیہ السلام کو اہل یمن کی طرف سے یمن آنے کی حقیقت میں دعوت نہیں دی گئی تھی لہٰذا ان کے اندر یزید کے مقابل میں امام حسین علیہ السلام کی حمایت کرنے کا کوئی تحرک نہیں تھا اور امام حسین علیہ السلام کو کوفہ بلانے کے سلسلہ میں وہاں کے لوگوں میں جو جذبات تھے اس کا ایک فیصد بھی یمن والوں کے اندر موجود نہیں تھا، وہ جذبات اہلبیت (ع)کے عقیدتی دفاع، شام کے مقابل میں مرکزیت کوفہ کی بحالی،کوفہ میں علوی حکومت عدل کے قیام اور بنی امیہ کے ظلم و ستم سے رہائی وغیرہ سے عبارت تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔الکامل فی التاریخ، ج۲،ص۵۴۵۔
۲۔سابق حوالہ،ج۱، ص۶۵۱۔
۳۔کامل آگاہی کے لئے ملاحظہ کریں ر۔ک«کتاب الغارات»۔
۴۔الکامل فی التاریخ، ج۲، ص ۴۳۱۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 Nov 16