Friday - 2018 August 17
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186788
Published : 19/4/2017 18:48

تقویٰ کے فوائد:

تقویٰ یعنی بندے کے سارے کام اللہ کی مرضی کے مطابق ہوں:رہبر انقلاب

تقویٰ کے مد مقابل غفلت و بے توجہی اور بغیر بصیرت کے کیا جانے والا اقدام ہے،خداوند عالم، مومنین کی زندگی کے معاملات میں عدم توجہ اور ہوشیار نہ رہنے جیسے عمل کو پسند نہیں فرماتا ہے،مؤمن کو اپنی زندگی کے سبھی امور او رمعاملات میں آنکھیں وا کرنے اور دل کو بیدار رکھنے کی ضرورت ہے،مؤمن کا زندگی کے سبھی امور اور معاملات میں آنکھیں کھولنے اور بیدار دل رکھنے کا فائدہ اور اثر یہ ہے کہ وہ یہ خیال رکھتا ہے کہ جو کام وہ کررہا ہے کہیں وہ خدا کی مرضی اور اس کی منشاء اور حکم کے خلاف نہ ہو۔

ولایت پورٹل:خداوند عالم سورۂ بقرہ کی  آیت نمبر۱۸۳میں فرماتا ہے:{لَعَلَّکُمْ تَتَّقُوْنَ}یعنی یہ روزہ، تقویٰ کی جانب جانے والی سیڑھی اورآپ کے دل و جان میں اس کے گھرکرنے اور جاگزیں ہونے کا وسیلہ ہے۔ تقویٰ یہ ہے کہ انسان اپنے سبھی اعمال اور طرز عمل میں اس بات کا لحاظ رکھے کہ اس کا یہ کام خداوند عالم کی مرضی اور اس کے حکم کے مطابق ہے یا نہیں، یہی دیکھ بھال اور پرہیز اور ہمیشہ ہوشیار رہنا، تقویٰ کہلاتا ہے۔
تقویٰ کے مد مقابل غفلت و بے توجہی اور بغیر بصیرت کے کیا جانے والا اقدام ہے،خداوند عالم، مومنین کی زندگی کے معاملات میں عدم توجہ اور ہوشیار نہ رہنے جیسے عمل کو پسند نہیں فرماتا ہے،مؤمن کو اپنی زندگی کے سبھی امور او رمعاملات میں آنکھیں وا کرنے اور دل کو بیدار رکھنے کی ضرورت ہے،مؤمن کا زندگی کے سبھی امور اور معاملات میں آنکھیں کھولنے اور بیدار دل رکھنے کا فائدہ اور اثر یہ ہے کہ وہ یہ خیال رکھتا ہے کہ جو کام وہ کررہا ہے کہیں وہ خدا کی مرضی اور اس کی منشاء اور حکم کے خلاف نہ ہو۔
جب اس طرح کی حفاظت کا خیال مومن کے دل میں وجود میں آئے گا کہ اپنے طرزعمل ، سکوت ، قیام قعود اور ہر دیگر اقدام میں خدا کی روش اور معین کردہ اصولوں کے تحت عمل کرے گا تو اس توجہ و بیداری اور انتباہ کی حالت کو تقویٰ کہاجاتا ہے، جس کا فارسی زبان میں پرہیزگاری ترجمہ کیا گیا ہے اور پرہیزگاری کا مطلب یہ ہے کہ انسان کے اندر دائمی طور پر پرہیز اور انتباہ کی حالت پائی جاتی رہے، روزے کا فائدہ بھی یہی ہے۔

 



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 August 17