Wed - 2018 Dec 12
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190254
Published : 28/10/2017 18:28

زیارت امام حسین (ع)کے آداب

لہذا امام حسین(ع) کے ہر چاہنے والے پر ضروری ہے کہ حتی المقدور روز اربعین امام حسین(ع) کی زیارت کرنے کی کوشش کرے، اور اگر بعض مشکلات کی بنا پر نہ جاسکے تو کوشش کرے اپنی جگہ کسی اور کو بھیجے تاکہ اس سعادت سے خود بھی مستفید ہو سکے اور دوسرے بھی مستفید ہوں۔


ولایت پورٹل:پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم اور اہل بیت عصمت و طھارت علیہم السلام کی ظاہری حیات میں جس شخص کو بھی آپ کی زیارت نصیب ہوتی وہ آپ کے لطف وکرم سے فائدہ اٹھاتا اور وہ حضرات، خداوند متعال کی عطا کردہ مادی و معنوی اور معرفتی نعمتوں سے اپنے زائرین کو فیضیاب فرماتے تھے،اپنی شہادت کے بعد بھی وہ خدا کی عطاکردہ ان نعمتوں کو خداوند متعال کے اذن سے اپنے زائرین اور شیعوں کوعطا فرما سکتے ہیں اور اپنے چاہنے والوں کے لئے پروردگار عالم کی بارگاہ میں دعا اور ان کے لئے پروردگار عالم کا لطف وکرم اور رحمت و بخشش طلب کر سکتے ہیں،لہذا اس کے کچھ آداب ہیں، مقالہ ھذا میں صرف امام صادق کی روایت پر اکتفا کیا جارہا ہے:
ایک شخص امام جعفر صادق علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہوا اور اس نے عرض کیا:«قُلْتُ لَهُ إِذَا خَرَجْنَا إِلَى أَبِیکَ أَ فَکُنَّا فِی حَجٍّ قَالَ بَلَى»۔ (کامل الزیارات، ص ۱۳1)  جب ہم آپ کے جد امام حسین علیہ السلام کی زیارت کے لئے نکلتے ہیں تو کیا ہم حج کے سفر میں ہوتے ہیں؟ کیا یہ کام جو ہم کرتے ہیں اس کام کی مانند ہے جو ہم حج کے لئے کرتے ہیں؟ حضرت نے فرمایا: ہاں،  راوی نے کہا :مولا! کیا ہم پر وہ سب کچھ لازم ہے جو ایک حاجی پر لازم  و ضروری ہے؟ حضرت نے دریافت فرمایا: کن مسائل کے بارے میں؟ کہا : ان امور کے بارے میں کہ جو عموماً حاجی پر لازم ہوتے ہیں: حضرت نے فرمایا : ہاں ایسا ہی ہے اور اس کے بعد آپ نے کچھ چیزیں گنوائیں اور فرمایا:« قَالَ یَلْزَمُکَ حُسْنُ الصَّحَابَةِ لِمَنْ یَصْحَبُکَ وَ یَلْزَمُکَ قِلَّةُ الْکَلَامِ إِلَّا بِخَیْرٍ وَ یَلْزَمُکَ کَثْرَةُ ذِکْرِ اللَّهِ وَ یَلْزَمُکَ نَظَافَةُ الثِّیَابِ...................»۔ان افراد کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آؤ جو تمہارے ساتھ سفر میں ہیں،اور جتنا ممکن ہو کم سے کم کلام کریں،اور جو بھی تکلم کریں اس میں خیر ہی خیر ہو،اسی طرح زیادہ سے زیادہ ذکر خدا کرو اور تمہارا لباس  بھی صاف ستھرا و پاک ہو،تم زیادہ سے زیادہ نماز پڑھو اور صلوات کا ورد کرو، اگر کوئی حاجت مند تمہارے پاس اپنی حاجت لیکر آئے اگر ممکن ہو تو اسے رد نہ کرو،اپنے دینی بھائیوں کے ساتھ اچھا سلوک کرو ،پھر آپ نے فرمایا:کیا کہنے ان لوگوں کے جو اس راہ میں امام حسین علیہ السلام کے زائرین کی خدمت کرتے ہیں۔
لہذا امام حسین(ع) کے ہر چاہنے والے پر ضروری ہے کہ حتی المقدور روز اربعین امام حسین(ع) کی زیارت کرنے کی کوشش کرے، اور اگر بعض مشکلات کی بنا پر  نہ جاسکے تو کوشش کرے اپنی جگہ کسی اور کو بھیجے تاکہ اس سعادت سے خود بھی مستفید ہو سکے اور دوسرے بھی مستفید ہوں۔


پیروان ولایت


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Dec 12